Featured Photo Journalism — 26 March 2014
دوسری نظر
زیاد احسن

neelum women

مظفرآباد تک تو شائد آپ ہمت کر کے آ ہی جائیں گے مگر نیلم کا رخ بہت کم لوگوں نے کیا ہو گا۔ اس وادی کو خدا نے بہت حسن و رعنائی سے نوازا مگر ابھی تک ہم نے اس کو سر بمہر کر کے غیر معینہ مدت کے لیے عوام کے لیے بند کر رکھا ہے۔ البتہ خواص اور بلخصوص سرکار کے لیے تپتی ہوئے موسمِ گرما سے بچنے کے لیے نیلم میں کچھ ریسٹ ہاوؑس بنا ڈالے ہیں۔ نیلم کو باقی ملک سے ملانے والی اکلوتی سڑک جس پر پچھلے سالوں میں کچھ کام ہوا ہے مظفرآباد سے اٹھمقام تک آپ کو سوا دو گھنٹے میں لے جائے گی جس پر پہلے چار گھنٹےلگا کرتے تھے۔ ویسےایماندری سے بتاوں تو غنیمت ہے۔
جینئین سیاحوں کے لیے اس وادی میں بہت کچھ ہے۔ دریاۓ نیلم مظفرآباد سے آپ کے ہمراہ ہو گا اور آخر تک ساتھ دے گا۔ پانی البتہ اتنا ٹھنڈا ہے کہ گرمیوں میں کچھ سیکنڈ کے لیے پانی میں ہاتھ ڈالیں گے تو صرف سانس رکے گا اتنی ہی دیر مگر مریں گے نہیں۔ بالای نیلم میں سرما میں دریا منجمد ملے گا اگر کبھی برف سے اٹی وادی میں جانا پسند کریں۔ اس دریا کی خصوصیت اس کا یخ بستہ مگر شفاف نیلگوں پانی ہے
آبجو بھی جا بجا ہیں جن کا شور مچاتا پانی دودھ کی طرح سفید یا پھر ہیروں کی طرح چمکتا ملے گا۔ پہاڑ سے آتی کسی ایسی ہی آبجو کے ساتھ ذرا پیدل چڑھائی چڑہیں تو قریب ہی کوئی پن چکی ضرور ملے گی جہاں پیسی جانے والی نیلم کی پیلی مکئی اگر کھانے کا اتفاق ہو تو آپ بہت سارے زائقے آپ کو ہیچ محسوس ہوں گے۔
اٹھمقام سے آگے آپ کو دیودار اور بیاڑ کے گھنے جنگل ملیں گے۔ دیودار کی لکڑی جو ناقابلِ یقین حد تک مہنگی ہے، اپر نیلم میں جا بجا بکھری ہوئی، دریا میں بہتی ہوئی یا پھر چولہوں میں نظر آئے گی۔ ہوٹلوں یا گھروں سے آنیوالی اس لکڑی کے جلنے کی مہک یقینا مسحور کر دیتی ہے۔ ہانڈی میں شامل ہوتا اس لکڑی کا دھواں بھی آپ کو ضرور احساس دلاتا رہے گا کہ آپ اس وقت کہاں ہیں
لکڑی کے بنے ہوئے کئی منزلہ مکان، کچھ بوسیدہ پڑے ہوئے اور کچھ نئے اور دلکش۔ انہیں دیکھ کر سوچ ہالی ووڈ کی کسی فلم کے بھوت بنگلے یا کسی یورپین طرز کے لکڑی اور چھجےدار مکانوں کی طرف جاتی ہے
اپریل میں پھلدار درختوں پر سفید اور گلابی پھول کھل کر سماں ہی بدل دیتے ہیں۔ اگرچہ یہ گلابی دن کچھ ہی ہوتے ہیں مگر اللہ۔۔۔۔ وادی سارا سال رنگ بدلتی رہتی ہے اور اس رنگ بھرنے کے عمل میں آنکھوں کو طراوٹ بخشنے والا سبزہ، کہرا، ساون اور سرما میں جنگل میں اتر آنیوالے بادل، پھول، رنگ بدلتا پانی اور برف سب شامل ہیں
پاکستان کے قدرتی طور پر حسین ترین علاقوں میں رہنے والوں کی زندگیاں بلاعموم بدقسمتی سے اتنی ہی دشوار اور قابلِ رحم ہیں۔ عورتوں کی حالتِ زار وادیِ نیلم میں بھی کچھ ایسی ہی ہے۔ دیودار اور برف سے ڈھکے پہاڑوں یا دریاۓ نیلم کے نیلگوں اور کبھی زمرد ہوتے ہوئےپانی کے حسن سے سر جھٹکیں گے تو عورتوں اور بچیوں کی پر مشقت مصروفیات آپ کو لبِ سڑک نظر آئیں گی۔ سروں پر پانی کے گڑوے، نہیں تو لکڑی یا پھر بھاری پتھر ! ان کی زندگی کا محور بس یہی یا اسی طرح کے بوجھ ملیں گے۔ دریا کے دونوں اطراف، پہاڑوں اور گھاٹیوں میں پانی اور گلیشیر کی بہا کر لائی ہوئی لکڑی چنتی یہ عورت جس کے ذمے باقی کاموں کا تصور کریں تو شائید مایا اینجلو کی “وومین ورک” کو نئے سرے سے لکھنا پڑے۔ ان میں سے بہت کم کو شائید ہی کبھی اس زندگی سے مختلف کسی زندگی کے بارے میں سوچنے، سننے یا دیکھنے کا موقع ملا ہو۔ تخیل کو بھی کم از کم ایک لمحے کی فرصت تو چاہیے ہی ہوتی ہے۔۔

Related Articles

Share

About Author

Ibtidah is a non-profit bi-lingual publication working in collaboration with Laaltain Magazine to counter mispresentative and biased media reporting.

(5) Readers Comments

  1. Bahot khoob manzar kashi ki.
    ” Takhiyul ko b kam az kam aik lamhay ki fursat to chaheay hoti hay”
    Ap ki soch ki wusat pay hairaan hoon. MASHAH ALLAH

  2. Owsom work and presentation of true kashmir ,a wonderfull place to spend holidays in god gifted beautifull neelam valley …ziad you described it really well imprsed with this …great work well done 🙂

  3. Waah…………..Wonderful………..I wish i can see these places if a good friend invites me…..who may be the writer of this beautiful writing

    Keep it up Ziad Ahsan

  4. I have been fortunate enough to travel number of times in Upper Neelum Valley Azad Kashmir on official assignments and still love to visit this awesome master piece of nature specially Sardari. However, the skill and art of articulation, interpretation and description of one’s reflection and observations is something speaks of both God gifted and acquired imaginative and artistic qualities which ziad has. Great Ziad Ahsan, Allah bless you and flourish your this skills further.

  5. Awesome work dear Ziad Ahsan. I never got enough time to visit these beautiful valleys of Kashmir. I m planning to visit these valleys whenever I will land in my home land. Ziad Ahsan you deserve to be appreciated more then these words. Will wait for more updates like this .